تحریک انصاف اور عوامی تحریک کے لیڈروں کی ایک دوسرے کوگالیاں،دھکے

اسلام آباد(نمائندہ جنگ)عدالت عظمیٰ میں ’’پاناما لیکس کیس‘‘ کی سماعت کے بعد  پاکستان تحریک انصاف کے ترجمان نعیم الحق اور پاکستان عوامی تحریک کے مرکزی رہنما خرم نواز گنڈا پور کے درمیان میڈیا کے ساتھ پہلے گفتگو کرنے کے تنازعہ پر پہلے تلخ کلامی اور گالم گلوچ ہوئی جس کے بعد شیخ رشید سمیت دیگراتحادی کارکنوں نے بیچ بچائو کرواکرمزید تماشہ لگنے سے بچایا۔ جمعرات کو کیس کی سماعت کے بعد مذکورہ بالا رہنمائوں سمیت مختلف سیاسی رہنما عدالت کے احاطہ میں پہنچے تو وہاں موجود صحافیوں نے حسب معمول انہیں ’’میڈیا ٹاک‘‘کی دعوت دی توپاکستان عوامی تحریک کے مرکزی رہنما، خرم نواز گنڈاپورنے کیمروں کے سامنے کیس کے حوالہ سے اپنے خیالات کا اظہارکرنا چاہا توپی ٹی آئی کے رہنما نعیم الحق نے انہیں یہ کہہ کر بیچ میں ہی ٹوک دیا کہ پہلے ہمارے قائد عمران خان بات کریں گے پھر آپ بات کیجئے گا۔خرم نواز نے اس مداخلت کا سخت برا منایا اور تلخی کا مظاہرہ کیا تو نعیم الحق نے انہیں کیمروں کے سامنے لگے ڈائس سے پیچھے دھکیل دیا اور دونوں کے درمیان پہلے تلخ کلامی ہوئی جوبعد میں گالم گلوچ تک جاپہنچی۔قومی میڈیا اس سارے منظر کو براہ راست دکھاتا رہا۔ اس موقع پرعوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد اور دیگر پارٹی رہنمائوں نے دونوں رہنمائوں کے منہ پر ہاتھ رکھ کر اور سمجھا بجھا کر معاملہ کو مزید بگڑنے سے بچا لیا ،جس کے بعد دونوں کے مابین عدالت کی حدود سے باہر بھی ٹکراؤ ہوا۔ خرم نواز باہر نکلے تو بہت غصے میں تھے۔ انہوں نے عمران خان کی ہمشیرہ علیمہ خان سے پی ٹی آئی کے ترجمان کے رویئے کا شکوہ کرتے ہوئے کہا کہ اگرا تحا دی جماعت کے رہنمائوں کا یہی رویہ رہا تو میں برداشت نہیں کروں گا، میں صرف اپنا موقف پیش کرنے گیا تھا لیکن مجھے گالیاں دی گئیں۔ بدتمیزی کی گئی اور دھکے دیئے گئے۔ بعدازاں میڈیا سے بات کرتے ہوئے خرم نواز گنڈا پور نے کہا کہ میں ہم وزیراعظم کو خاطر میں نہیں لاتے تو عمران خان کی کیا حیثیت ہے؟ پرویز خٹک مشکل وقت میں دُم دبا کرایسے بھاگا کہ خیبرپختونخوا جاکرپناہ لی ہے۔ میڈیا کسی سیاستدان کے باپ کی جاگیر نہیں ہے، میں شیخ رشید سے بات کررہا تھا جس پر نعیم الحق نے بدتمیزی کی اور کہا کہ پہلے عمران خان بات کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ نعیم الحق غنڈہ شخص ہے، میں گالیاں برداشت نہیں کروں گا۔ نعیم الحق کو اپنے رویے پر معافی مانگنا ہوگی اگر مزید بدمعاشی کی تو سپریم کورٹ سے باہر نہیں جانے دوں گا۔ نعیم الحق معافی مانگے، اگر عمران خان نے اس معاملہ پر توجہ نہ دی توہم خود اپنے راستے کا تعین کریں گے۔ تحریک انصاف کی قیادت کو ہم سے تعلق کی کوئی پروا نہیں ہے۔این این آئی کے مطاق نعیم الحق نے شیخ رشید کوکہاکہ یہ آدمی گالیاں دے رہاہے جس پر شیخ رشید نے کہاکہ آہستہ بولیں لائیوجارہاہے۔اعجاز چوہدری نے نعیم الحق کے منہ پر ہاتھ رکھ دیا اور پھرنعیم الحق نے ایک طرف منہ کرکے موبائل فون نکال لیادوسری طرف خرم نواز کاکہناتھاکہ انہیں دھمکایاگیاکہ ہمارا شہنشاہ آرہاہے ، آپ بات نہیں کرسکتے۔نعیم الحق کا یہ رویہ افسوسناک ہے کیونکہ ہم کرپشن کے خلاف مل کر کام کر رہے ہیں۔نعیم الحق نے الزام عائد کیا کہ خرم نواز گنڈا پور نے گالیاں دیں جس پر غصہ آیا۔