جہانگیر ترین اور عمران خان کی بہن مشکل میں پھنس گئیں

اسلام آباد (اے پی پی) سپریم کورٹ میں پاناما لیکس پر کمیشن کے قیام سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران فاضل وکیل نے کہاکہ یہاں دو معاملات یعنی لندن میں جائیداد کی غیرقانونی خریداری اور مس ڈیکلریشن کی بات کی جارہی ہے، اگر وزیراعظم کی ذات کے حوالے سے کوئی الزام ثابت ہوجائے تو وہ نتائج کاسامناکرنے کیلئے تیارہیں،اسی نوعیت کے الزامات جہانگیرترین اور عمران خان کی بہن کے حوالے سے بھی موجود ہیں۔ جس پرچیف جسٹس نے ان سے کہا کہ یہ معاملہ ہمارے سامنے نہیں، اگرآپ چاہتے ہیں کہ اس معاملہ کودیکھاجائے تواس سلسلے میں درخواست دائرکریں۔سماعت کے دوبارہ آغاز پر حکومتی وکیل سلمان اسلم بٹ نے ایک صفحے پر مشتمل وزیر اعظم کا خیر مقدمی بیان پڑھ کر سنایا جس میں کہا گیا تھا کہ عدالت جس طرح چاہے کمیشن تشکیل دے حکومت کمیشن اور عدالت کے ہر فیصلے کو تسلیم کرے گی ، وزیراعظم لندن کی جائیدادوں پر کمیشن بنانے کی تجویز سے متفق ہیں لیکن کمیشن کو جہانگیر ترین اور عمران خان کی بہن کا کیس بھی بھیجا جائے، اگر الزامات ثابت ہو گئے تو وزیراعظم قانونی نتائج کو تسلیم کریں گے۔ اس پر تحریک انصاف کے وکیل کا کہنا تھا کہ حکومت کمیشن کو جائیدادوں اور گوشواروں تک محدود کر رہی ہے۔