2 نومبر کا دھرنا، ٹرانسپورٹرز بھی میدان میں آگئے

لاہور پاکستان تحریک انصاف کی طر ف سے 2نومبر کو اسلام آباد بند کر نے کی دھمکی کے حوالے سے گڈز ٹرانسپورٹروں نے حکمت عملی طے کر لی ہے دھرنے سے قبل زبر دستی، بغیر معاوضہ اور کنٹینرز میں پڑے مال کو نقصان سے بچانے کے لیے ٹرانسپورٹروں نے یکم نو مبرکو وفاقی دارالحکومت کے گردونواح میں مال برداری کا پہیہ جام کرنے کافیصلہ کیا ہے اور انتظامیہ کے ساتھ ساتھ تحریک انصاف کو کنٹینرز کی فراہمی سے باز رہنے کا فیصلہ کیا ہے۔ دوسری جانب پاکستان گڈز ٹرانسپور ٹ ایسو سی ایشن نے انتظامیہ کو کنٹینرز کی دستیابی کے لیے باقاعدہ ساز باز کے ذریعے کنٹینرز دینے کی حامی بھر لی ہے جس کے لیے فی کنٹینر یو میہ پانچ ہزار روپے کرایہ مقرر کیا گیا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق تحریک انصاف کی جانب سے دو نو مبر کو اسلام آباد بند کروانے اور دھر نا دینے کے لیے جہاں حکومت لائحہ عمل تر تیب د ے رہی ہے وہیں گڈز ٹرانسپورٹروں نے نقصان سے بچنے کے لیے حکمت عملی تیار کر لی ہے ۔ واضح رہے کہ ماضی میں ہو نے والے دھرنے اور احتجاجی دھر نوں کو روکنے کے لیے انتظامیہ شاہراہو ں سے کنٹینرز پکڑ کر مطلو بہ راستے بند کر دیتی ہے اور کنٹینرز کے عوض ٹرانسپورٹرز کو کرایہ اخراجات ادا کر نے کی بجائے لو ڈر گاڑی کی چابی کو بھی غائب کر دیا جاتا ہے جبکہ کنٹینرز میں تاجروں کا مو جو د مال خراب ہو نے کے باعث کئی ایک ٹرانسپورٹروں کو لاکھوں روپے خراب مال کے ادا کر نے پڑے ہیں ۔ دو نو مبر کو اسلام آباد کو ایک بار پھر بند کرنے کی تحریک انصاف کی کال نے گڈز ٹرانسپورٹروں کو تشو یش میں ڈال دیا ہے ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ بیشتر گڈز ٹرانسپورٹروں نے فیصلہ کیا ہے کنٹینرز کو زبر دستی پکڑنے کے خوف سے بچنے کے لیے یکم نو مبر کو اسلام آباد راولپنڈی اور ملحقہ علاقو ں میں مال برداری کا پہیہ جام رکھا جائے گا تاکہ نقصان سے محفو ظ رہا جا سکے ۔ دوسری جانب پاکستان گڈز ٹرانسپورٹ ایسو سی ایشن کے رہنماؤ ں نبیل محمو د ، مرزا ارشد اقبال اور ملک شو کت نے کہا ہے کہ حکومت کو اگر انتظامی ماحو ل بہتر بنانے کے لیے د و نو مبر کو کنٹینرز کی ضرورت ہے تو اس کے لیے انتظامیہ پہلے ایسو سی ایشن کے ساتھ مذاکر ات کر ے اور کنٹینرز کی فراہمی کے لیے باقاعدہ کرایہ مختص کر ے اور کنٹینرز و لوڈر گاڑیوں کا کسی قسم کا نقصان نہ ہو نے کی گارنٹی دے ۔ مذکورہ شرائط کے تحت اگر انتظامیہ یا تحریک انصاف کو کنٹینرز چائیے تو ہم سینکڑوں کی تعداد میں کنٹینرز فراہم کر سکتے ہیں ۔