سانحہ کوئٹہ ،تنظیموں کا غصہ نہیں ہے ،3ملکوں کی جنگ ہے

لاہور کوئٹہ ایک بار پھر نوحہ کناں ہے ،یہ حالیہ سال کا سب سے سنگین حملہ تھا ۔ پروگرام دنیا کامران خان کیساتھ میں گفتگو کرتے ہوئے میزبان نے کہا کہ سانحہ کوئٹہ کا اصل ذمہ دار کون ہے ؟داعش ،تحریک طالبان (محسود گروپ) اور لشکر جھنگوی العالمی نے ذمہ داری قبول کرنے کے دعوے کئے ہیں۔اس حوالے سے پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف پیس اینڈ سٹڈیز کے ڈائریکٹر عامر رانا نے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پچھلے دو ماہ سے کوئٹہ اور اس کے مضافات میں لشکر جھنگوی العالمی سرگرم ہو گئی ہے ۔اس بات کا امکان ہے کہ اس گروپ نے داعش کے ساتھ اتحاد کر لیا ہے ۔

کامران خان کہتے ہیں کہ خطے کی صورتحال سے واقف ماہرین کے مطابق یہ تنظیموں کا غصہ نہیں ہے ،3ملکوں کی جنگ ہے ،جب بھی پاکستان میں کوئی دہشت گردی کا واقعہ ہوتا ہے پاکستان کے ذمہ دار ترین لوگ شاید ہی یہ دعویٰ نہ کرتے ہوں کہ یہ دہشت گردی را یا این ڈی ایس نے کرائی ہے ہم نہیں کہتے کہ یہ سو فیصد غلط بات ہے مگر یہ صرف پاکستان میں نہیں ہوتا ۔افغانستان یا بھارت میں کوئی بڑا واقعہ ہو جائے تو وہ بھی با لکل اسی انداز میں اس کے لئے پاکستان کو مورد الزام ٹھہراتے ہیں ۔ پاکستان ،بھارت اور افغانستان دل صاف کریں پھر خطے کو دہشت گردی سے آزاد کرائیں۔