والدین بچیوں کے موبائل فون وقتاً فوقتاً چیک کیا کریں،ڈی آئی جی سی آئی اے

کراچی ڈی آئی جی سی آئی اے ڈاکٹر جمیل احمد کا کہنا ہے کہ سعود آباد سے لاپتہ ہونے والی   تینوں طالبات گھریلو پریشانیوں اور گھر والوں کے رویے سےتنگ آ کر گھر سے فرار ہوئیں۔تینوں لڑکیوں کو عدالت نے دارالایمان بھیج دیا ہے۔پیر کو اپنے دفتر میں چیف سی پی ایل سی زبیر حبیب اور ایس ایس پی اینٹی وائلنٹ کرائم سیل طارق دھاریجو کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے ڈی آئی جی ڈاکٹر جمیل کا کہنا تھا کہ والدین کو چاہئے کہ وہ اپنے بچوں کیساتھ شفقت سے پیش آئیں اور ان پر بلا وجہ تشدد سے اجتناب کریں جبکہ اسکول جانے والی بچیوں کے موبائل فون بھی وقتاً فوقتاً چیک کریں۔ ڈاکٹر جمیل نے بتایا کہ ملیر سعود آباد سے تین روز قبل لاپتہ ہونیوالی تینوں اسکول طالبات کو لیاقت آباد سے بازیاب کرالیا گیا، سندھ پولیس کے سم لوکیٹرز مصروف تھے بصورت دیگر ایک روز قبل ہی پولیس طالبات کو بازیاب کرا لیتی ۔تینوں طالبات نے گھر سے نکل کر اسکول جانے کی بجائے شہر سے باہر نکلنے کی کوشش کی تھی۔ انہوں نے بتایا کہ دوران تفتیش ایک مشتبہ موبائل فون نمبرجو ایک لڑکی(ب) سے رابطے میں تھا کا ریکارڈ نکالا گیا اور اس نمبر کو ٹریس کر کے بلدیہ ٹاؤن سعید آباد سیکٹر5-aمیں چھاپہ مار کر اعجاز نامی شخص کو حراست میں لیا گیا جس کی نشاندہی پر لیاقت آباد  نمبر10میں چھاپہ مار کر دانش نامی شخص کے گھر سے تینوں طالبات کو بازیاب کرالیا گیا۔ ڈاکٹر جمیل نے کہا کہ تینوں لڑکیوں نے بتایا کہ انہوں نے از خود گھریلو ظلم و ستم سے تنگ آ کر اسکول کے بستے میں اپنے کپڑے رکھ راہ فرار اختیار کی۔تینوں حب ریور روڈ کے ذریعے بلوچستان جانے کے ارادے سے نکلیں لیکن جب مواچھ گوٹھ پہنچیں اور وہاں کا ماحول دیکھا تو خوفزدہ ہو گئیں اور وہاں سے کینٹ اسٹیشن آ گئیں لیکن اس وقت کوئی بھی ٹرین بیرون شہر جانے کیلئے دستیاب نہیں تھی جس کے بعد انہیں کسی نے بتایا کہ جناح اسپتال کے قریب کوئی ہوٹل ہے جہاں وہ کمرہ لیکر رہ سکتی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ جب تینوں طالبات جناح اسپتال کے باہر پہنچیں تو وہاں موجود اعجاز نے ایک پرچی پر اپنا موبائل فون نمبر لکھ کر ان کے سامنے پھینک دیا جس کے بعد ان میں سے ایک لڑکی نے اس نمبر پر فون کیا۔ جس پر اعجاز نے انہیں اپنے تعاون کا یقین دلایا اور اپنے ساتھ چلنے کے لئے کہا۔