وزیر اعظم نواز شریف عالمی فورم پرکشمیر کا مقدمہ لڑنے میں مصروف

وزیر اعظم میاں نواز شریف کا کہنا ہے کشمیریوں کو کسی صورت تنہا نہیں چھوڑیں گے۔ہم دنیا کو کشمیر سے متعلق کیے گئے وعدے سے بھاگنے نہیں دیں گے۔وزیر اعظم میاں نواز شریف اپنی ٹیم کے ساتھ امریکا میں عالمی فورم پرکشمیر کا مقدمہ لڑنے میں مصروف ہیں، وزیراعظم کی برطانوی ہم منصب، امریکی وزیر خارجہ، امریکی سابق صدر کلنٹن، سعودی شہزادہ محمد بن نائف اور نیوزی لینڈ کے وزیراعظم سے ملاقاتیں کیں۔
نیویارک میں برطانوی وزیراعظم تھریسا مے سے ملاقات میں انہیں مقبوضہ کشمیرمیں بگڑتی صورتحال،بھارتی جارحیت اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے آگاہ کیا۔وزیراعظم نواز شریف نے واضح کیا کہ کشمیرکاز کیلئے پاکستان کامؤقف دوٹوک اورواضح ہے،پاکستان کشمیریوں کوکسی صورت تنہانہیں چھوڑے گا ، کشمیرپرسلامتی کونسل کی قراردادوں پرفوری عمل کیاجائے،جموںو کشمیرکے عوام کواپنافیصلہ خود کرنے کااختیار دیاجائے۔وزیراعظم نے کہا کہ اگرعالمی برادری بھارتی ریاستی دہشتگردی بندکرانے میں کامیاب نہ ہوئی تو اس میں مزیداضافہ ہوگا،اس موقع پربرطانوی وزیراعظم نے دہشتگردی کے خاتمے میں پاکستان کے کردار اور افغانستان میں قیام امن کے لیے پاکستان کے کردارکو سراہا۔اس سے پہلے وزیراعظم نواز شریف نے امریکی وزیر خارجہ جان کیری سے ملاقات کی اورسابق امریکی صدربل کلنٹن کا پاکستان اور بھارت کے درمیان مسائل حل کرنےکا وعدہ یاد دلایا۔وزیر اعظم نواز شریف نے امریکی وزیر خارجہ کو بتایا کہ گزشتہ ڈھائی ماہ میں مقبوضہ کشمیر میں 107 کشمیری شہید اور ہزاروں زخمی ہوچکے ہیں،جان کیری پاک بھارت دوطرفہ مسائل حل کرنے کے لیے مدد فراہم کریں۔امریکی وزیر خارجہ جان کیری کا کہنا تھا کہ امن و استحکام پاکستان اور افغانستان کےباہمی مفاد میں ہے، دہشت گردی اور انتہاپسندی کے خاتمے کے لیے پاکستان کی مسلح افواج، سیکیورٹی اداروں اور پولیس کی کوششیں قابل تحسین ہیں ۔وزیر اعظم کی سعودی شہزادہ محمد بن نائف سے بھی ملاقات ہوئی، جس میں دو طرفہ امور،علاقائی صورتحال سمیت امت مسلمہ کے اتحاد پرتبادلہ خیال کیا گیا۔وزیراعظم نواز شریف اور نیوزی لینڈ کے ہم منصب جان کی ،کے درمیان بھی ملاقات ہوئی۔دونوں رہنماوں نے دو طرفہ تعلقات پر اطمینان کا اظہار کیا۔