پنجاب حکومت کو بدنام کرنے کی بڑی سازش

لاہور(نیوزڈیسک) پنجاب حکومت کو بدنام کرنے کی ایک سازش سامنے آئی ہے ۔جس میں پولیس کے بعض ناراض افسروں کے ملوث ہونے کے شواہد ملے ہیں ۔سازش کے تحت اگلے مرحلے میں چند روز میں تھانوں میں شہریوں کی چھترول اور ٹنڈیں کرنے کی فوٹیجزٹی وی چینلز کو فراہم کی جائیں گی جبکہ لاوارث لاشوں کے حوالے سے بھی مہم شروع کی جائے گی ،قبل ازیںشہرمیں بچوں کے مبینہ اغوا اور سڑکوں پر موٹر سائیکل سوارمنچلوں کی فائرنگ اور ون ویلنگ کی فوٹیجز سمیت امن و امان کی خراب صورتحال پر مبنی خبریں ایک کمپیئن کی شکل میں چلائی جارہی ہیں ۔جس میں بعض ناراض آوٹ آف ٹرن پرموشن کیس کی زد میں آنے والے پولیس افسروں کے ہاتھ کے علاوہ پوائنٹ سکورننگ کرنے کے لئے سیاسی جماعتوں کا بھی منفی کردار سامنے آرہا ہے ۔مافیا اپنے مذموم مقاصد حاصل کرنے کے لئے خوف و ہراس پھیلانے کے علاوہ معاشرے میں متشدد کارروائیوں کا بھی باعث بن رہا ہے۔ تفصیلات کے مطابق شہر میں بچوں کے اغوا کے حوالے سے جو خوفناک صورتحال پیش کی جارہی ہے ۔اس میں حقائق سے زیادہ مبالغہ آرائی سے کام لیا جارہا ہے۔ اگر حقائق تسلیم کریں توبچوں کی لاپتہ ہونے کے واقعات ہمیشہ سے معمول کا حصہ رہے ہیں ۔ اخبارات میں روزانہ دو سے تین بچوں کے تلاش گمشدہ کے اشتہارات اصل صوتحال کی عکاسی کرتے ہیں ،مگر اب بوجہ گھر سے مرضی سے بھاگے بچوں کے علاوہ کمسن بچوں کی گمشدگی کو بھی اغوا کا رنگ دیا جارہا ہے ۔جس سے شہر میں اتنا خوف وہراس پھیل گیا ہے کہ شہریوں کی جانب سے خواتین سمیت بے گناہ لوگوں کو مبینہ دہشت گرد سمجھ کر مارنے پیٹنے کے ایک درجن سے زائد واقعات رونما ہو چکے ہیں۔جو کسی بڑے سانحہ کا پیش خیمہ ثابت ہوسکتے ہیں۔ اغوا کے واقعات کے علاوہ شہر کی سڑکوں پر دن دیہاڑے منچلوں کی فائرنگ کی پرانی فوٹیجز بھی ٹی وی چینلز پردھڑلے سے چلائی جارہی ہیں۔کئی ماہ پرانے کے واقعات کو اکٹھا کر کے موجودہ صوتحال بنا کر پیش کیا جارہا ہے۔

Facebook Comments